توہین عدالت کیس، عمران خان اسلام آباد ہائیکورٹ میں پیش

اسلام آباد: خاتون جج کو دھمکیاں دینے پر توہین عدالت کے کیس میں چیئرمین تحریک انصاف عمران خان کے خلاف کیس کی سماعت جاری ہے، اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ کی سربراہی میں لارجر بنچ سماعت کر رہا ہے۔
جسٹس محسن اختر کیانی، جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب، جسٹس طارق محمود جہانگیری اور جسٹس بابر ستار بینچ میں شامل ہیں، سابق وزیراعظم عمران خان اسلام آباد ہائیکورٹ کے کمرہ عدالت میں موجود ہیں۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے انتظامیہ کوعوام کیلئے مشکلات پیدا کرنے سے روکنے کا حکم دیتے ہوئے کہا ہے کہ رجسٹرار ہائیکورٹ ڈپٹی کمشنر اور آئی جی پولیس کو فوری ہدایات جاری کریں، یقینی بنائیں کہ سیکیورٹی انتظامات کے دوران عوام کیلئے مزید مشکلات پیدا نہ ہوں، ہائیکورٹ کی اطراف میں کاروباری مراکز کو بند نہ کیا جائے۔

عمران خان نے عدالت جاتے ہوئے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایسا لگ رہا تھا کہ آج کلبھوشن یادیو عدالت آ رہا تھا، مجھے سمجھ نہیں آرہی اتنا خوف کیا ہے، مجھے تو آج آتے آتے بھی پندرہ منٹ لگ گئے، عمران خان نے کہا جیل میں جا کر اور خطرناک ہو جاؤں گا۔

سابق وزیراعظم عمران خان سے صحافیوں کی جانب سے سوال کیا گیا کہ کیا آپ غیر مشروط معافی مانگیں گے؟ تو چیئرمین پی ٹٰی آئی نے جواب دیا بعد میں بات کرونگا کہیں کوئی غلط خبر ہی نہ چل جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں